ووٹ کا استعمال کرتے وقت عوام اپنے ضمیر اور نظریئے کے مطابق فیصلہ کریں، مرکزی رہنما پاکستان سنی تحریک این اے 237 کے اُمیدوار محمد شاہد غوریپاکستان کی آج کی ابتر صورتحال کے ذمہ دار اہلسنت نہیں باریاں لینے والے حکمران ہیں،شاہد غوری

مورخہ: 31-12-2023 حوالہ نمبر : PST( )
ووٹ کا استعمال کرتے وقت عوام اپنے ضمیر اور نظریئے کے مطابق فیصلہ کریں، مرکزی رہنما پاکستان سنی تحریک این اے 237 کے اُمیدوار محمد شاہد غوری


پاکستان کی آج کی ابتر صورتحال کے ذمہ دار اہلسنت نہیں باریاں لینے والے حکمران ہیں،شاہد غوری
اہلسنت کے تمام لوگوں کو دعوت دیتا ہوں وہ تنظیمات اہلسنت میں شامل ہوجائیں اپنے ووٹ سے اہلسنت کے نمائندوں کو ایوانوں میں بھیجیں،شاہد غوری
ملک مسائل کی دلدل میں دھنسا ہواہے اور معاشی عدم استحکام کا شکار ہے تو باریاں لینے والے حکمرانوں کی کرپشن اس کا سبب ہے،شاہد غوری


دین تخت پر تب آئے گا جب یارسول اللہ کہنے والے یہ سمجھ جائینگے میرے ووٹ کی طاقت کیا ہے،شاہد غوری
ریاست مدینہ طرز حکمرانی کیلئے عوام کو اپنے ووٹ کا استعمال ایسے افراد کیلئے کرنا ہوگا جو ملک میں نظام مصطفی کا نفاذ چاہتے ہیں،شاہد غوری


کراچی (اسٹاف رپورٹر)سینئر مرکزی رہنما پاکستان سنی تحریک این اے 237 اہلسنت کے متفقہ اُمیدوار محمد شاہد غوری نے کہا ہے کہ ووٹ کا استعمال کرتے وقت عوام اپنے ضمیر اور نظریئے کے مطابق فیصلہ کریں،پاکستان کی آج کی ابتر صورتحال کے ذمہ دار اہلسنت نہیں باریاں لینے والے حکمران ہیں،یہود ونصاریٰ کے ایجنٹ دین اسلام کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ بنے ہوئے ہیں،اہلسنت کے لوگ جو دیگرسیاسی جماعتوں میں کام کررہے ہیں کیا انہوں نے اپنی سیاسی قیادتوں سے پوچھا کے اسلام منافی بل،اور ختم نبوت ﷺ کے تحفظ کیلئے میدان میں کیوں نہیں آتے،اہلسنت کے تمام لوگوں کو دعوت دیتا ہوں وہ تنظیمات اہلسنت میں شامل ہوجائیں اور اپنے ووٹ سے اہلسنت کے نمائندوں کو ایوانوں میں بھیجیں،پاکستان آج مسائل کی دلدل میں دھنسا ہواہے اور معاشی طور پر عدم استحکام کا شکار ہے تو باریاں لینے والے حکمرانوں کی کرپشن اس کا بڑا سبب ہے،عوام کرین کو ووٹ دے کر اہلسنت کے نمائندوں کو کامیاب کریں تاکہ ملک سے ظلم ناانصافی کا خاتمہ ہوجائے اور غریبوں کو بنیادی حقوق مل سکیں،ان خیالات کا اظہار انہون نے محمود آباد NA-237اور PS-105میں عوامی کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے کیا،اس موقع پر محمد ریاض سیفی،خالد محمود نے بھی خطاب کیا،شاہد غوری کا کارنر میٹنگ سے خطاب میں مزید کہنا تھا کہ آج پاکستان کا فیصلہ یہود ونصاریٰ کررہے ہیں،ایک ارب ڈالر کا قرضہ لیا جاتا ہے عوام پر پچاس کروڑ خرچ کئے جاتے ہیں باقی کے روپے حکمرانوں کی جیبوں میں جاتے ہیں،قوم قرضوں کے بوجھ تلے دبتی جارہی ہے اس کی وجہ کرپشن اور اقرباء پروری ہے،دین تخت پر تب آئے گا جب یارسول اللہ کہنے والے یہ سمجھ جائینگے میرے ووٹ کی طاقت کیا ہے،پاکستان میں موجود حکمران چاہتے ہیں کہ ہم اسرائیل کو تسلیم کرلیں ہم اسرئیل کو کسی طور بھی تسلیم نہیں کرینگے،75سال پہلے ہمارے علماء اور قائد اعظم نے اسرائیل کو ناجائز ریاست کہا ہم اسے ناجائز ریاست ہی سمجھتے ہیں،ریاست مدینہ طرز حکمرانی کیلئے عوام کو اپنے ووٹ کا استعمال ایسے افراد کیلئے کرنا ہوگا جو ملک میں نظام مصطفی کا نفاذ چاہتے ہیں۔#

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Don`t copy text!